فنکار سیلاب متاثرین کے لیے چندہ اکٹھا کرنے کے لیے ہاتھ جوڑ رہے ہیں۔


اسلام آباد – ملک بھر کے فنکاروں نے سیلاب زدگان کے لیے فنڈز جمع کرنے کے لیے یہاں منعقد ہونے والی نمائش میں اپنا کام عطیہ کر کے سیلاب سے بچاؤ کی کوششوں میں حصہ ڈالنے کے لیے ہاتھ ملایا ہے۔ اس سال بے مثال بارشوں نے ملک کے بیشتر حصوں میں تباہی مچا دی ہے، جس کے نتیجے میں قیمتی جانیں ضائع ہوئیں اور بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی۔ ملک بھر میں سیلاب کی صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے آرٹ ایڈ نے آرٹ گیلری F-9 پارک میں فنڈ ریزنگ تقریب کا اہتمام کیا۔ پاکستان میں حالیہ سیلاب سے متاثرہ لوگوں کی مدد اور ان کی بحالی میں حصہ لینے کے لیے ملک کے مشہور اور نامور فنکاروں نے اپنے فن پارے عطیہ کیے ہیں۔

نمائش کا افتتاح چیف کمشنر اسلام آباد کیپٹن (ر) محمد عثمان یونس نے کیا، دوسرے روز یہ نمائش 9 اکتوبر تک جاری رہے گی۔اس موقع پر ملک کے نامور مصوروں، فنکاروں اور شہریوں کی بڑی تعداد نے بھی شرکت کی۔ نمائش کے آخری روز آرٹ کے ان فن پاروں کی نیلامی کی جائے گی جس کے بعد موصول ہونے والی رقم سیلاب زدگان کی ہر ممکن مدد کے لیے وزیراعظم کے فلڈ ریلیف اکاؤنٹ میں عطیہ کی جائے گی۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے چیف کمشنر نے کہا کہ شہری ایجنسی سیلاب متاثرین کی مدد کے لیے ہر ممکن کوششیں کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آرٹ گیلری خواتین اور نوجوانوں کے لیے ایک بہترین پلیٹ فارم ہے جہاں سے وہ ملک پاکستان کی ثقافت اور تہذیب کو آنے والی نسلوں بالخصوص دوسرے ممالک میں رہنے والوں تک منتقل کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سول انتظامیہ مستقبل میں بھی ایسی نمائشوں کا انعقاد کرتی رہے گی۔ یونس نے کہا کہ کوئی بھی شہر صرف شاہراہوں، پارکوں یا سٹریٹ لائٹس کی تعمیر و مرمت سے نہیں بنتا بلکہ اس کی اپنی الگ ثقافت، تہذیب اور طرز زندگی ہے اور کوئی بھی معاشرہ ثقافتی شناخت کے بغیر اپنا مقام حاصل نہیں کر سکتا۔ انہوں نے کہا کہ اسلام آباد خوبصورت شہر ہونے کے ساتھ ساتھ تہذیب و ثقافت کے حوالے سے بھی اپنی الگ اور منفرد شناخت رکھتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ فن اور ثقافت کو اجاگر کرنے میں ہماری فنکار برادری کا زیادہ اہم کردار ہے۔ چیئرمین آرٹ ایڈ جمال شاہ نے کہا کہ نمائش کا مقصد فنکاروں کی کمیونٹی کو متحرک کرنا ہے تاکہ لاتعداد ہم وطنوں کی مدد کے لیے آگے آئیں۔ شاہ نے کہا، “ردعمل تیز اور زبردست رہا ہے، جس میں بورڈ بھر کے فنکاروں نے فلڈ ریلیف فنڈ جمع کرنے والی نمائش کے لیے کام کیا ہے۔” انہوں نے کہا کہ یہ انسانیت میں سرمایہ کاری ہے، اور یہ ہماری مخلصانہ دعا ہے کہ ہم جو کچھ بھی جمع کریں وہ مصائب کو دور کرنے میں مددگار ثابت ہو۔

.



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published.